121

پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں اسلام کے خلاف شائع ہونے والی کتابوں کو بند کرنے کا فیصلہ

لاہور (نیوز ڈیسک)پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں اسلام کے خلاف شائع ہونے والی کتابوں کو بند کرنے کا فیصلہ کمیٹی ممبر ایم پی اے میاں شفیع محمد نے کمیٹی کی رپورٹ اسمبلی اجلاس میں پیش کی اسمبلی اجلاس میں اپوزیشن لیڈر حمزہ شہباز سمیت دیگر اپوزیشن اور حکومتی اراکین اسمبلی نے کمیٹی کی رپورٹ کی تائید کی اور متفقہ طور پر قرارداد منظور کی گئی اسپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی نے فوری طور پر مارکیٹ سے کتابیں ضبط کرنے کا حکم دے دیا
تفصیل کے مطابق چند روز قبل رکن پنجاب اسمبلی حافظ عمار یاسر نے پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں قرارداد پیش کی کہ چند کتابیں ایسی ہیں جن میں اسلام کے خلاف باتیں لکھی گئیں ہیں
جس پر اسپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی نے فوری طور وزیر قانون راجہ محمد بشارت،ایم پے اے میاں شفیع محمد،صوبائی وزیر تعلیم مراد راس، صوبائی وزیر عمار یاسر،ایم پی اے کاشف محمود،ایم پی اے محمد الیاس پر مشتمل 6رکنی کمیٹی بنائی کمیٹی نے اس کی تحقیقات کی
اور 5جون بروز جمعتہ المبارک کو فلیٹی ہوٹل میں پنجا ب اسمبلی کا اجلاس منعقد ہوا اسمبلی اجلاس میں ایم پی اے میاں شفیع محمد نے کمیٹی کی رپورٹ پیش کی کمیٹی کی تحقیقات میں ثابت ہوا کہ تین کتابیں ہیں جن کا نام (دی فرسٹ مسلم) (شارٹ ہسٹری آف اسلام)(آ فٹر دی پروفٹ) شامل ہیں ان کتابوں میں حضرت علی کرم اللہ وجہہ،حضرت بی بی عائشہ رضہ اللہ عنہا اور دیگر اصحابہ کرام کے خلاف لکھا گیا ہے کمیٹی کی جانب سے ان کتابوں کو فوری طوربند کرنے کی سفارش کی گئی
اسمبلی اجلاس میں
اپوزیشن لیڈر حمزہ شہباز سمیت دیگر اپوزیشن اور حکومتی اراکین اسمبلی نے کمیٹی کی رپورٹ کی تائید کی اور اسمبلی میں متفقہ طور پر قرارداد منظور کی گئی کہ ان کتابوں کو فوری طور پر بند کیا جائے
اجلاس میں متفقہ طور پر قرارداد منظور ہونے کے بعد اسپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مارکیٹ سے فوری طور پر کتابیں ضبط کی جائیں اور تحقیقات کی جائے کہ کتابیں کہاں سے پرنٹ ہوئیں اور مارکیٹ میں کیسے پہنچیں اس کی رپورٹ ایک ہفتہ میں پیش کی جائے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں