Coronavirus 107

محکمہ حیوانات کےعملہ کی ہڈحرامی عروج پر ویٹرنری ڈاکٹر اپنے گھروں میں بیٹھ کر تنخواہ لینے لگے جانوروں کو عرصہ دراز سے کوئی ویکسین نہیں

((احمد پور(تحصیل رپورٹر مصور نقوی )

محکمہ حیوانات کےعملہ کی ہڈحرامی عروج پر۔
ویٹرنری ڈاکٹر اپنے گھروں میں بیٹھ کر تنخواہ لینے لگے جانوروں کو عرصہ دراز سے کوئی ویکسین نہیں لگائی گئی درجنوں جانور ہلاک ہوگئے ہیں بیشتر جانور بیماریوں میں مبتلاء سینکڑوں جانور مرنے کا خطرہ۔ایک تو ویٹرنری ڈاکٹر فیلڈ میں آتے نہیں اگر ڈاکٹر فیلڈ میں آ بھی جاے تو ہزار ،دوہزار لیے واپس نہیں جاتے حالانکہ جانوروں کی ٹریٹ منٹ مفت ہے جو ایک غریب کی جلتی پہ تیل کے برابر ہے
تفصیل کے مطابق عالی واہن ،پپلی راجن ،عبداللہ پور گرد و نواح میں بلیک کواٹر ویکسین نہیں کی گئی ۔
محمد لطیف گھلو نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا ایک طرف وزیراعظم نے مویشی پال پروگرام کے احکامات جاری کیۓ ہوئے ہیں دوسری طرف محکمہ حیوانات کے ڈاکٹروں کی غفلت لاپرواہی کی وجہ سے 2سال سے ہمارے علاقےمیں جانوروں کو کوئی ویکسین نہیں لگائی گئی جس سے آۓ روز جانور مر رہے ہیں درجنوں مرچکےھیں کئ بارہم نے سرکاری ہسپتال ویٹرنری سنٹر مبارک پور ،ہتھیجی میں جانوروں کو ویکسین لگانے کا کہا مگر ڈاکٹروں نے ہر بار یہ کہا کہ گورنمنٹ کی طرف سے ویکسین نہیں آئی جیسے ہی ویکسین آئیگی ہم رابطہ کرینگی دو سال دھکے کھانے کے باوجود بھی ابھی تک کوئی ویکسین نہیں آئی اور یہ بھی پتہ نہیں چل سکا کہ ویکسین کب آئیگی جس سے ہمارے سینکڑوں جانور مرنے کا خطرہ ہے محمد بلال گھلو نے وزیراعظم عمران خان ، اور وزیراعلی پنجاب سے اس بارے نوٹس لینے کی اپیل کی ہے تاکہ بروقت ویکسین کراکے پاکستان کو اس خسارے سے محفوظ کیا جاے ہمارا علاقہ بیک ورڈ ہے اور دریا ستلج کے کنارے ہے دریا کے مسلسل بہنے سے بیماریاں عروج پر ہیں جانوروں کی اموات کرونا سے تجاوز کر گئی حکام بالا سے فلفور ایکشن کی اپیل۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں